مریم نواز نے موجودہ حکومت کے خاتمے کیلئے اسلام آباد کی جانب مارچ کا عندیہ دیدیا

نوازشریف اقتدار کی نہیں اقدار کی سیاست کرتا ہے ، عمران خان! آپ نے اقتدار کا سودا کر کے گھاٹے کا سودا کیا ہے، انتخابات میں مہریں نواز شریف پر لگتی ہیں ، اندر سے سلیکٹڈ نکل آتا ہے، سینٹ میں بھی ایسا ہوا ،جعلی وزیراعظم کیا تم نواز شریف کے دور کی روٹی، بجلی، گیس کی قیمتیں واپس لا سکتے ہو،، آج ہر کوئی عمران خان کو جھولیاں اٹھا کر بددعائیں دے رہا ہے، جلسہ عام سے خطاب
مریم نواز نے موجودہ حکومت کے خاتمے کیلئے اسلام آباد کی جانب مارچ کا ..
پاکپتن پاکستان مسلم لیگ (ن )کی نائب صدر مریم نواز نے موجودہ حکومت کے خاتمے کیلئے اسلام آباد کی جانب مارچ کا عندیہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ نوازشریف اقتدار کی نہیں اقدار کی سیاست کرتا ہے ، عمران خان! آپ نے اقتدار کا سودا کر کے گھاٹے کا سودا کیا ہے، انتخابات میں مہریں نواز شریف پر لگتی ہیں ، اندر سے سلیکٹڈ نکل آتا ہے، سینٹ میں بھی ایسا ہوا ،جعلی وزیراعظم کیا تم نواز شریف کے دور کی روٹی، بجلی، گیس کی قیمتیں واپس لا سکتے ہو،، آج ہر کوئی عمران خان کو جھولیاں اٹھا کر بددعائیں دے رہا ہے۔

تفصیلات کے مطابق مریم نواز گذشتہ روز گیارہ گھنٹوں کا سفر کر کے لاہور سے براستہ پھولنگر، اوکاڑہ، ساہیوال ریلی کی شکل میں پاکپتن پہنچیں، راستے میں ان کا شاندار استقبال ہوتا رہا۔

لیگی کارکنوں نے مریم نواز کی گاڑی پر مسلسل پھولوں کی پتیاں نچھاور کیں، مریم نواز نے ہاتھ ہلا ہلا کر لیگی کارکنوں کے نعروں کا جواب دیا۔ ضلعی انتظامیہ کی جانب سے پلے گرائونڈ میں جلسے کی اجازت ملنے کے باوجود وہاں جلسہ نہیں کیا بلکہ چوک آرائیاں میں کرسیاں لگا کر عارضی جلسہ گاہ بنائی۔

مریم نواز کانے خطاب میں اپنی اور نواز شریف کی جانب سے اسلام علیکم کہا۔ مریم نواز نے کہا کہ میری اور کوٹ لکھپت جیل میں بے گناہ قید نواز شریف کی جانب سے سلام، رات کا ڈیرھ بج رہا ہے اور آپ عوام گزشتہ روز دوپہر 2 بجے سے کھڑے ہیں، میں آپ کی محبت کو سلام پیش کرتی ہوں۔ مریم نواز نے لیگی کارکنوں کو اپنے موبائل کی لائٹس آن کرنے کی ہدایت کی۔

مریم نواز نے اپنے خطاب میں کہا کہ آپ نے مجھے جو عزت دی ہے، میں ساری عمر اس پر آپ کی احسان مند رہوں گی۔ مریم نواز نے سوال اٹھایا کہ کیا رات کے ڈیڑھ بجے کبھی پاکپتن کسی کے استقبال کیلئے نکلا ہے، کاش ہمارے محبوب لیڈر نواز شریف اس منظر کو دیکھ سکتے۔ مریم نواز نے کہا کہ گذشتہ ملاقات پر نواز شریف نے آپ پاکپتن والوں کو خصوصی سلام بھیجا۔

میں لاہور سے پاکپتن کا 3 گھنٹے کا فاصلہ 11 گھنٹوں میں صرف آپ کی محبت سے طے کر پائی، اتنی محبت دیکھ کر مجھے بابا فرید کا فقرہ یاد آیا کہ ’’ہور نیواں ہو‘‘کہ اللہ عاجزی کو پسند کرتا ہے۔ اتنی بڑی تعداد میں رات ڈیڑھ بجے پاکپتن میں موجود ہونا بہت بڑی بات پے، آپ نے اپنی بہن کا دل خوش کر دیا۔ انہوں نے کہا کہ آپ وزیراعظم عمران خان کو گالیاں دیتے ہیں لیکن میرا دل نہیں کرتا کہ آپ عمران خان کو گالی دیں کیونکہ ہمارا لیڈر نواز شریف اقتدار کی نہیں بلکہ اقدار کی سیاست کرتا ہے۔

مریم نواز نے کہا کہ عمران خان! آپ نے اقتدار کا سودا کر کے گھاٹے کا سودا کیا ہے کیونکہ عمران خان نے مہنگائی کر کے عوام کا جینا محال کر دیا ہے۔ مریم نواز نے سوال اٹھایا کہ کیا آپ کو نواز شریف کا سستا دور یاد آتا ہے یا نہیں۔ لیگی نائب صدر نے کہا کہ انتخابات میں مہریں نواز شریف پر لگتی ہیں لیکن اندر سے سلیکٹڈ نکل آتا ہے، سینٹ میں بھی مہریں شیر پر لگیں لیکن اندر سے ایک اور سلیکٹڈ نکل آیا، کیا دھاندلی سے کامیابی جیت ہوتی ہے یا شرمندگی، اداروں کے پیچھے چھپ کر جیتنا کوئی فخر کی بات نہیں، جو سینٹ میں ہوا، کوئی شرم والا ہو تو خود ہی اپنی جان دے دے۔

مریم نواز نے کہا کہ عوام کو دینے کیلئے سلیکٹڈ کے پاس کچھ نہیں تاہم سینیٹرز خریدنے کے لئے اس کے پاس اربوں روپیہ ہے، عمران خان شرم کرو۔ مریم نواز نے اپنے خطاب میں کہا کہ جو سینٹ میں ہوا، یہی کچھ 2018 کے انتخابات میں بھی ہوا تھا، عام انتخابات میں شیر پر مہریں لگائی گئیں لیکن آپ کے ووٹ کی عزت نہیں ہوئی اور آپ کے لئے آواز اٹھانے والا نواز شریف آج جیل میں بے گناہ قید ہے۔

مریم نواز نے کہا کہ مجھے ہاتھ اٹھا کے بتائوکہ کتنے لوگوں نے جج ارشد ملک کی ویڈیو دیکھی تھی، جس میں جج کہہ رہا تھا کہ نواز شریف بے گناہ تھا لیکن مجھے میری نامناسب فلم دکھا کر مجھے نواز شریف کیخلاف فیصلہ دینے پر مجبور کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ کوئی جعلی اعظم سے پوچھے کہ تم کس منہ سے نواز شریف کیخلاف بات کرتے ہو، کیا تم نواز شریف کے دور کی روٹی، بجلی، گیس کی قیمتیں واپس لا سکتے ہو، کیا اس دور کی طرح غریب کا چولہا جلا سکتے ہو، آج ہر کوئی عمران خان کو جھولیاں اٹھا کر بددعائیں دے رہا ہے۔

مریم نواز نے کہا کہ عمران خان کو شیروانی پہننے کا بہت شوق تھا جو عوام کو بہت مہنگی پڑی ہے، شیروانی کے شوقین کو بتا دو کہ اتنی مہنگائی کر کے تم چھپ کر نہیں بیٹھ سکتے، تم فورا اقتدار چھوڑ کر گھر جاو ورنہ پاکپتن والے تمہیں اسلام آباد آ کر نکال پھنکیں گے۔ مریم نواز کا کہنا تھا کہبیٹے سے تنخواہ نہ لینے پر نواز شریف کو نہیں بلکہ ملک کو سزا ہوئی کیونکہ آج تاریخ کا مہنگا ترین جج کرنے والے بھی عمران خان کو ناقص انتظامات پر بددعائیں دے رہے ہیں۔

مریم نواز نے کہا کہ عمران خان سے سوال روٹی مہنگی ہونے کا کیا جائے تو کہتا ہے کہ میں نواز شریف کو نہیں چھوڑوں گا، اس کا کھانا بند کر دوں گا، کیا آپ نے اپنی زندگی میں ایسا شخص دیکھا ہے۔ میں پاکپتن والوں سے نواز شریف کی بے گناہی کا ثبوت لینے آئی ہوں اس لئے یہاں کی عوام ہاتھ اٹھا کر نواز شریف کی بے گناہی کا ثبوت دے، عوام بے گناہ نواز شریف کی بے گناہی اور رہائی کے لئے ہاتھ اٹھائے اور بابا فرید کے مزار پر بھی نواز شریف کے لئے دعا کرے۔

مریم نواز نے پاکپتن کی عوام کے سامنے سوال رکھا کہ اس جعلی حکومت کو آخری دھکا لگانے کے لئے اسلام آباد کی جانب مارچ کی ضرورت پڑی تو اسلام آباد جائیں گے کہ نہیں۔ مریم نواز نے اسٹیج سیکرٹری کو کہہ کر نواز شریف کو رہا کرنے کے نعرے لگوائے اور آخر میں مریم نواز نے خود بھی نواز شریف کی رہائی کے لئے نعرے لگوائے۔ قبل ازیں لاہور سے پاکپتن کے سفر کے دوران مریم نواز کی گاڑی کم از کم تین مرتبہ ہیٹ اپ ہو کر بند ہوئی جس پر ان کے سکیورٹی سٹاف نے گاڑی کے ریڈی ایٹر پر پانی ڈال کر گاڑی کو ٹھنڈا کیا۔

Please follow and like us:
0

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Social media & sharing icons powered by UltimatelySocial