بھارت کی انگلینڈ کے ہاتھوں شکست نے سیمی فائنل کی دوڑ کو مزید دلچسپ کر دیا


انگلینڈ کی جیت کے باوجود پاکستان کے سیمی فائنل میں جانے کے امکانات تاحال موجود

انگلینڈ: آئی سی سی ورلڈ کپ 2019ء کے تحت گذشتہ روز بھارت اور انگلینڈ کے مابین مقابلہ ہوا جس میں بھارت کو 31 رنز سے شکست ہوئی۔ بھارت کی شکست اور میزبان ٹیم کی جیت کے بعد آئی سی سی ورلڈ کپ 2019ء کے سیمی فائنل کے لیے جاری دوڑ مزید تیز اور دلچسپ ہو گئی ہے۔ انگلینڈ کی جیت کے باوجود پاکستان کے سیمی فائنل میں جانے کے امکانات تاحال موجود ہیں لیکن پاکستان کو سیمی فائنل کھیلنے والی آخری چار ٹیموں میں جگہ بنانے کے لیے اب دوسری ٹیموں کے نتائج پر انحصار کرنا ہوگا جس کے باعث اس صورتحال کو کافی گھمبیر اور سنجیدہ قرار دیا جا رہا ہے کیونکہ سیمی فائنل میں کوالیفائی کرنے کے لیے قومی ٹیم بظاہر خود کچھ نہیں کر سکتی جبکہ قومی ٹیم کو اب دیگر ٹیموں کی ہار جیت کے لیے دعا کرنا ہو گی تاکہ سیمی فائنل میں جگہ بنائی جا سکے۔

اس وقت دفاعی چیمپئین آسٹریلیا آٹھ میچوں میں 14 پوائنٹس کے ساتھ کوالیفائی کرنے والی واحد ٹیم ہے۔ انگلینڈ کے 8 میچوں میں دس پوائنٹس ہیں اور اس کے سیمی فائنل میں جانے کے امکانات کافی زیادہ روشن ہیں۔ پاکستان کی قومی ٹیم کا سیمی فائنل میں جانے کے لیے سب سے آسان راستہ یہ ہے کہ بدھ کو چیسٹرلی اسٹریٹ میں نیوزی لینڈ، انگلینڈ کو شکست دے اور پاکستان جمعہ کو لارڈز میں بنگلہ دیش کے خلاف جیت اپنے نام کرے۔
اگر انگلینڈ نیوزی لینڈ کو ہرا دیتا ہے تو انگلینڈ کو بڑے مارجن سے فتح حاصل کرنا ہوگی۔ یہی نہیں بلکہ پاکستان کو بنگلہ دیش کو ہرانے کے ساتھ ساتھ اپنا نیٹ رن ریٹ بھی بہتر بنانا ہوگا۔ اگر انگلینڈ نیوزی لینڈ کو شکست دے دے اور پاکستان بنگلہ دیش کے خلاف میچ جیت جائے تو پھر پاکستان اور نیوزی لینڈ کے گیارہ گیارہ پوائنٹس ہوں گے اور فیصلہ نیٹ رن ریٹ پر ہوگا۔
فی الوقت نیوزی لینڈ کا رن ریٹ پاکستان سے بہتر ہے۔ انگلینڈ کی جیت کے بعد پاکستان اس وقت پوائنٹس ٹیبل پر چوتھے سے پانچویں نمبر پرچلا گیا اور سیمی فائنل تک رسائی کے لیے اسے نہ صرف بنگلہ دیش کو ہرانا ضروری ہے بلکہ یہ اُمید بھی کرنی ہے کہ نیوزی لینڈ تین جولائی کو انگلینڈ کو شکست دے دے۔ سیمی فائنل کی دوڑ میں سری لنکا اور بنگلہ دیش بھی ہیں لیکن انہیں بھی پاکستان کی طرح دوسری ٹیموں پر انحصار کرنا ہے۔
اس وقت بھارت نے سات میچ کھیلے ، اس کے گیارہ پوائنٹس ہیں پوائنٹس ٹیبل پر بھارت کا دوسرا نمبر ہے۔ نیوزی لینڈ نے 8 میچوں میں سے پانچ میچ جیتے اس کے گیارہ پوائنٹس ہیں۔ پاکستان نے آٹھ میچوں میں سے چار میچ جیتے اور ایک میچ بارش کی نذر ہوا ہے لہٰذا پاکستان کے نو پوائنٹس ہیں لیکن پاکستان کا نیٹ رن ریٹ منفی صفر اعشاریہ 792 ہے جبکہ نیوزی لینڈ کا رن ریٹ مثبت صفر اعشاریہ 572 ہے۔ ورلڈ کپ میں بھارت کو ایک میچ سری لنکا سے لیڈز اور دوسرا میچ بنگلہ دیش سے پیر کو کھیلنا ہے۔ اگر انگلینڈ کو اتوار کو برمنگھم کے میچ میں شکست ہوئی تو پاکستان اور بنگلہ دیش کے سیمی فائنل تک رسائی کے قوی اور روشن امکانات ہیں۔

Please follow and like us:
0

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Social media & sharing icons powered by UltimatelySocial